Nov 062018
 

دورہ چین لاحاصل رہا، دنیا سیلیکٹڈ وزیر اعظم پر اعتماد نہیں کرتی، ایمل ولی خان
چین نے پاکستان کو باضابطہ طور پر امداد دینے کا اعلان نہیں کیا،مزید بات چیت کا مؤقف اپنایا ہوا ہے۔
ملک شدید معاشی گرداب میں ہے جس سے نکلنے کی کوئی صورت دکھائی نہیں دے رہی۔
پاکستانی معیشت کو اپنے پاؤں پر کھڑا کرنے کیلئے ملک میں صنعتکاروں کا اعتماد بحال کرنا ہوگا۔
ڈالر کی قدر میں اضافے کی وجہ سے کاروباری طبقے کا کروڑوں کا نقصان ہوچکا ہے۔
سوئس بینکوں میں پڑے دو سو ارب ڈالر کے ساتھ ساتھ کرپٹ عناصر سے پیسہ نکلوایا جائے۔

پشاور(پ ر) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی ڈپٹی جنرل سیکرٹری ایمل ولی خان نے وزیر اعظم کے دورہ چین پر ردعمل دیتے ہوئے کہا ہے کہ کپتان کو دورہ چین سے کچھ حاصل نہیں ہوا ، جو وزیر اعظم پارلیمنٹ کو ایسے حساس معاملات پر بھی اعتماد میں نہیں لیتے اُس کے ساتھ دنیا ایسا ہی سلوک کرتی ہے،باچا خان مرکز پشاور سے جاری اپنے بیان میں ایمل ولی خان کا کہنا تھا کہ کپتان اپنے دور ہ چین کے حوالے سے نہ صرف پارلیمنٹ کو اعتماد میں لیں بلکہ عوام پر واضح کریں کہ دورہ چین میں اُن کو کیا ملا ہے،چائنہ نے ابھی تک پاکستان کو باضابطہ طور پر امداد دینے کا اعلان نہیں کیا بلکہ چینی حکام نے موقف اپنایا ہے کہ پاکستان کو امداد دینے کے معاملے پر ابھی مزید بات چیت کی بھی ضرورت ہے، ایمل ولی خان کا کہنا تھا کہ ملک شدید معاشی گرداب میں ہے جس سے نکلنے کی کوئی صورت دکھائی نہیں دے رہی،حکومت کے پاس نہ کوئی معاشی وژن ہے اور ہی حکمت عملی موجود ہے، قرضوں پر معیشت چلانا عارضی حل ہے اگر کپتان نے واقعی پاکستانی معیشت کو اُٹھانا ہے تو ملک میں صنعتکاروں کا اعتماد بحال کرنا ہوگا،ملکی صنعتکاروں کا عمرانی حکومت پر ایک پائی کا بھروسہ نہیں جسکی وجہ سے ملک دن بہ دن معاشی بدحالی کا سامنا کررہا ہے،انہوں نے کہا کہ خراب معاشی صورتحال اور گیس بجلی اور دیگر اشیاء کے بعد پٹرولیم مصنوعات کی قیمتوں میں اضافے کی وجہ سے معاشی ،زرعی تجارتی،صنعتی سرگرمیوں میں بتدریج کمی آرہی ہے،مہنگائی کے ساتھ ساتھ بیروزگاری نے بھی حالات کو بدتر بنا دیا ہے۔ایمل ولی خان نے یہ بھی واضح کیا کہ روپے کی قدر میں اضافہ تک کاروباری طبقہ کاروبار سے دور ہوتا جائیگا کیونکہ ڈالر کی قدر میں اضافے کی وجہ سے کاروباری طبقے کا کروڑوں کا نقصان ہوچکا ہے جس کی وجہ سے لوگوں کا پاکستان کے کاروبار سے اعتماد اُٹھ گیا ہے،انہوں نے وفاقی وزیر خزانہ سے مطالبہ کیا کہ ملک کی معیشت کو پاوں پر کھڑا کرنے کیلئے اپنے دعووں کو اب سچ ثابت کریں،سوئس بینکوں میں پڑے دو سو ارب ڈالر کے ساتھ ساتھ کرپٹ عناصر سے پیسے باہر نکالیں تاکہ ملک کی معیشت اپنی پاوں پر کھڑی ہوسکے۔ 

[suffusion-the-author]

[suffusion-the-author display='description']