Jun 042018
 

پُرامن شہریوں کے خلاف امن کمیٹی کا مسلح حملہ ملک اور جمہوریت کے مفاد میں نہیں، میاں افتخار حسین 
وانا میں جس طرح ااحتجاج کرنے والوں پر گولیاں برسائی گئیں وہ قابل افسوس اقدام ہے۔
معاملے کی مکمل تحقیقات کر کے ملوث عناصر کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے۔
مستقبل میں ایسے واقعات کی روک تھام کیلئے اقدامات کئے جائیں ۔
امن کمیٹی کو شہریوں پر گولی چلانے کا اختیار نہیں، ملوث عناصر کو کڑی سزا دی جائے ۔
صورتحال واضح نہیں، سوشل میڈیا کے دور میں حقائق پر پردہ نہیں ڈالا جا سکتا۔

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی جنرل سیکرٹری میاں افتخار حسین نے وزیرستان میں ہونے والے واقعے پر افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ معاملے کی مکمل تحقیقات کر کے ملوث عناصر کو کیفر کردار تک پہنچایا جائے ، اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ اپنے حق کیلئے پر امن احتجاج کر نے والوں پر مسلح افراد کاحملہ افسوسناک ہے اور یہ کسی صورت ملک اور جمہوریت کے مفاد میں نہیں ، انہوں نے کہا کہ آئین و قانون کے دائرے میں اپنے جائز حق کیلئے پرامن جلسہ ، جلوس اور مظاہرہ کرنا ہر شہری کا بنیادی حق ہے اور اسے اس حق سے محروم نہیں کیا جا سکتا، میاں افتخار حسین نے کہا کہ حکومت ایسے اقدامات اٹھائے کہ شہریوں کے مسائل آئین اور قانون کے دائرے میں حل ہو سکیں ، کیونکہ جب قانونی راہیں مسدود ہو جائیں تو غیر آئینی راستے ہموار ہوتے ہیں،انہوں نے کہا کہ فاٹا کے صوبے میں انضمام کے بعد ان واقعات کا رونما ہونا کسی بڑے نقصان کا پیش خیمہ ثابت ہو سکتا ہے ، انہوں نے کہا کہ ملک کی بقاء کیلئے مستقبل میں ایسے واقعات کی روک تھام کیلئے اقدامات کئے جائیں ،انہوں نے کہا کہ وزیرستان میں بے گناہ شہریوں پر حملے میں کون ملوث ہے ،اس واقعے نے کئی سوالات کو جنم دیا ہے اور صورتحال ابھی تک واضح نہیں ، میاں افتخار حسین نے کہا کہ ابھی تک متضاد اطلاعات سامنے آ رہی ہیں اگر حملہ آوردہشت گرد ہیں تو ان کے خلاف حکومت کو کاروائی کرنی چاہئے البتہ اگر یہ امن کمیٹی کے لوگ تھے تو انہیں کسی کو گولی مارنے کا اختیار کس نے دیا ہے ،؟ انہوں نے کہا کہ تحقیقات مکمل کر کے حقائق سے قوم کو آگاہ کیا جائے اور جو بھی اس سنگین جرم میں ملوث ہو اسے سزا دی جائے ،، انہوں نے کہا کہ یہ سوشل میڈیا کا دور ہے اور اس میں کسی بھی بات پر پردہ نہیں ڈالا جا سکتا تاہم سوشل میڈیا پر اگر کوئی واقع وائرل ہو اور کسی دوسرے ذرائع سے اس کے متضاد بیان سامنے آئے تو اس سے مزید غلط فہمیاں پید اہوتی ہیں ، انہوں نے کہا کہ پر امن احتجاج ہر شہری کا بنیادی حق ہے اور کسی کو بھی اپنے اس جائز حق سے محروم نہیں کیا جا سکتا ۔ 

[suffusion-the-author]

[suffusion-the-author display='description']