ایمل ولی خان باچا خان ٹرسٹ کے نئے سیکرٹری منتخب

 June-2016  Comments Off on ایمل ولی خان باچا خان ٹرسٹ کے نئے سیکرٹری منتخب
Jun 302016
 

مورخہ 30جون 2016ء بروز جمعرات

ایمل ولی خان باچا خان ٹرسٹ کے نئے سیکرٹری منتخب
ولی باغ چارسدہ میں بورڈ آف ڈائریکٹر ز کے اجلاس میں فیصلہ ، بشریٰ گوہر کا استعفیٰ منظور۔

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی ڈپٹی جنرل سیکرٹری ایمل ولی خان باچا خان ٹرسٹ کے نئے سیکرٹری منتخب کر لئے گئے ، اس بات کا اعلان گزشتہ روز ولی باغ چارسدہ میں پارٹی کے مرکزی صدر اسفندیار ولی خان کی زیر صدارت منعقدہ باچا خان ٹرسٹ کے بورڈ آف ڈائریکٹرز کے ایک اجلاس میں کیا گیا ،اس موقع پرصوبائی صدر امیر حیدر خان ہوتی ، افراسیاب خٹک، سینیٹر باز محمد خان ، محترمہ بشریٰ گوہر اور ایمل ولی خان نے شرکت کی، اجلاس میں متفقہ طور پر بشریٰ گوہر کا استعفے منظور کرتے ہوئے ایمل ولی خان کو باچا خان ٹرسٹ کا نیا انچارج مقرر کر دیا گیا ، ایمل ولی خان ٹرسٹ کے تمام امور کی نگرانی کرینگے ۔

اے این پی نے انتہا پسندی کو پروان چڑھانے والی سوچ کی ہمیشہ سے حوصلہ شکنی کی، سردار حسین بابک

 June-2016  Comments Off on اے این پی نے انتہا پسندی کو پروان چڑھانے والی سوچ کی ہمیشہ سے حوصلہ شکنی کی، سردار حسین بابک
Jun 282016
 

اے این پی نے انتہا پسندی کو پروان چڑھانے والی سوچ کی ہمیشہ سے حوصلہ شکنی کی، سردار حسین بابک
حکومت اے این پی دور میں کی جانے والی ترقیاتی سکیموں، مساجد ،سکولوں ،مدارس اور حجروں کو جاری کئے جانے والے فنڈ کا آڈٹ کر کے اپنا شوق پورا کر لے
اے این پی نے ایک لمحہ ضائع کئے بغیر عوامی بہبود کے منصوبوں اور صوبے کو ترقی کی راہ پر گامزن کرنے والے اقدامات کئے
پی ٹی آئی کو جمہوریت کا سرٹیفیکیٹ دینے والی غیر سرکاری تنظیم کی اپنی حیثیت بھی مشکوک ہو گئی ہے
عمران خان ملک میں جمہوریت کا درس دیتے ہیں جبکہ اپنی پارٹی میں اوپر سے نیچے تک عہدے ’’بقلم خود ‘‘بانٹ رہے ہیں
اے این پی پر تنقید کرنے والے اس تحریک کی قربانیوں اور تاریخ سے بے خبر ہیں ، ہم ان سے گلہ نہیں کرتے ۔
موجودہ حکومت کی ناقص منصوبہ بندی اور ہر طرف ناکامی کی وجہ سے عوام الناس اے این پی کی حکومت کی راہ تک رہے ہیں
پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری و پارلیمانی لیڈر سردار حسین بابک نے واضح کیا ہے کہ اے این پی دور میں اسلامی تعلیمات ، احکام الٰہی اور سیرت النبی کا پرچار کرنے والے مدارس کی حوصلہ افزائی کی گئی ہے اور انتہاپسندی و بنیاد پرستی کو پروان چڑھانے والی سوچ کی نہ صرف مخالفت کی گئی ہے بلکہ اسی سوچ کی حوصلہ شکنی معاشرے کو پر امن بنانے کیلئے لازمی ہے ، اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت اے این پی دور میں کی جانے والی ترقیاتی سکیموں، مساجد،سکولوں ،مدارس اور حجروں کو جاری کئے جانے والے فنڈ کا آڈٹ کر کے اپنا شوق پورا کر لے۔انہوں نے کہا کہ اے این پی کے دور حکومت میں صوبے میں ترقی کا دور دورہ تھا ، صوبے کے کونے کونے میں ترقیاتی کام جاری تھے ،اور اے این پی حکومت نے سرکاری سکولوں پر اعتماد بڑھانے کیلئے والدین اساتذہ کونسلز کے الیکشنز کرائے اوران کو اربوں روپے کا فنڈ دے کر سکولوں میں بنیادی سہولیات فراہم کرنے کیلئے عملی اقدامات اٹھائے، غرض یہکہ پختون معاشرے کی ہزاروں سال پرانی اخلاقیات رسم و رواج پختون روایات کے امین ادارے ہیں کو فنڈز فراہم کر دئے گئے، صوبائی جنرل سیکرٹری نے کہا کہ ان مدارس جو من و عن اسلامی تعلیمات احکام الہی اور سیرت النبی کو عام کرنے اور بغیر کسی ذاتی و سیاسی اغراض و مقاصد کے مذہبی شعور اجاگر کرنے کیلئے کام کر رہے ہیں ان کو نہ صرف فنڈز فراہم کئے بلکہ ان کی حوصلہ افزائی بھی کرتے رہے ہیں ، انہوں نے کہا کہ اے این پی دور حکومت میں صوبے میں مساجد کے ساتھ سرکاری سطح پر مالی امداد کی گئی اور انہیں فنڈز فراہم کئے گئے تا کہ مساجد میں ضروری سہولیات مہیا ہوں اور فرائض کی ادائیگی میں عوام و الناس کو سہولیات اور آسانیاں ہوں ، سابق صوبائی وزیر تعلیم نے موجودہ ھکومت کے بعض وزراء کی جانب سے اے این پی کے خلاف مسلسل ہرزہ سرائی کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہا کہ موجودہ حکومت کے وزراء اے این پی کی تاریخ سے نا بلد ہیں ، انہوں نے کہا کہ باچا خان اور ولی خان کی تحریک آج اسفندیار ولی خان کی قیادت میں ماضی کی بے مثال جانی و مالی قربانیوں کی تاریخ رقم کرتے ہوئے امن ،رواداری، معاشی انصاف اور سماجی ترقی کیلئے بر سر پیکار ہے، انہوں نے کہا کہ اس تحریک نے ہمیشہ جبر، تشدد ، نفرت ، نا انصافی، پسماندگی اورجہالت کے خلاف عملی قربانیاں دی ہیں،انہوں نے کہا کہ ہمارے دور میں صوبہ ترقی کی راہ پر گامزن تھا غربت میں واضح حد تک کمی آ چکی تھی لوگوں کو روزگار کے مواقع مل رہے تھے مہنگائی برائے نام تھی اور عوام دہشت گردی و شدت پسندی کے خلاف کمر بستہ تھے،انہوں نے کہا کہ اے این پی نے ایک لمحہ ضائع کئے بغیر عوامی بہبود کے منصوبوں اور صوبے کو ترقی کی راہ پر گامزن کرنے والے اقدامات کئے اور یہی وجہ ہے کہ آج عوام اے این پی کو اپنا نجات دہندہ تصور کرتے ہیں،سردار حسین بابک نے کہا کہ تعلیم صحت ٹورازم،معدنیات ،زراعت اور دیگر شعبوں میں اے این پی ے دور حکومت میں انقلابی اصلاحات کی گئیں جن کے ثمرات آج تک عوام تک پہنچ رہے ہیں، انہوں نے کہا کہ ہم نے انتہائی نا مساعد حالات میں بھی حوصلہ افزا نتائج دیئے ہیں ،جبکہ اس کے برعکس موجودہ حکومت نے’’ روخانہ پختونخوا ‘‘ کو نظر انداز کر دیا ، اور روایتی ہنر مند روزگار سکیم،اور سستا آٹا گھی پروگرام کی بندش قابل افسوس ہے، انہوں نے کہا کہ ہم پر الزامات در الزامات لگانے والوں کی آج اپنی کرپشن کہانیاں عام ہو چکی ہیں ،اور اب انہیں یہ بات ذہن نشین کر لینی چاہئے کہ انہیں جو ’’ ہمدرد ‘‘ اقتدار میں لائے تھے ان کی ہمدردیاں ختم ہو چکی ہیں، سہاروں کے بل پر کی جانے والی سیاست کی عمر چھوٹی ہوتی ہے،انہوں نے مزید کہا کہ موجودہ صوبائی حکومت صوبے کو لے ڈوبی ہے،اور دھرنوں اور احتجاج میں تین سال گزارنے والے اندرونی طور پر شدید اختلافات اور گروپ بندیوں کا شکارہیں اور یہی وجہ ہے کہ سارے ملک میں آن لائن فارم سازی اور تنظیم سازی کا شوشہ چھوڑنے والی تبدیلی سرکار ایک سال تک اشتہارات اور میڈیا کے ذریعے عام لوگوں کی توجہ اور نوجوا نوں کو دوبارہ ورغلانے کیلئے نت نئے حربے استعمال کر رہی تھی آخر کار اس تمام مہم کو ادھورا چھوڑ کر دوسروں کو جمہوریت کا سرٹیفیکیٹ دینے والی پارٹی میں نامزدگیاں کر کے نئی تنخواہ پر پرانے لوگوں کو عہدے تقسیم کئے جا رہے ہیں ، انہوں نے اس بات پر بھی حیرت کا اظہار کیا کہ تحریک انصاف کوملک کی بڑی جمہوری جماعت گرداننے اور اسے جمہوریت کا سرٹیفیکیٹ دینے والی بین الاقوامی غیر سرکاری تنظیم کی کارکردگی پر بھی سوالیہ نشان ہ

حکومت ڈیلیور کرنے میں ناکام رہی،2018اے این پی کی کامیابی کا سال ہے،ایمل ولی خان

 June-2016  Comments Off on حکومت ڈیلیور کرنے میں ناکام رہی،2018اے این پی کی کامیابی کا سال ہے،ایمل ولی خان
Jun 272016
 

مورخہ : 27.6.2016 بروز پیر

حکومت ڈیلیور کرنے میں ناکام رہی،2018اے این پی کی کامیابی کا سال ہے،ایمل ولی خان
پی ٹی آئی کی حکومت تبدیلی کے نعروں سے آگے نہیں بڑھ سکی ،عوام کو تین سال تک کوئی ریلیف نہیں دیا گیا
عوام پی ٹی آئی کو ووٹ دینے کے اپنے فیصلے پر پچھتا رہے ہیں ۔حالات میں کوئی بہتری نہیں آئی

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی ڈپٹی جنرل سیکرٹری ایمل ولی خان نے کہا کہ اے این پی نے اپنے پانچ سالہ دور اقتدار میں جہا ں ایک طرف بدترین حالات کے باوجود دہشت گردی کا مقابلہ کیا ہے اور بے پناہ قربانیا ں دیں ہیں وہاں صوبے میں ریکارڈ ترقیاتی منصوبے بھی پایہ تکمیل تک پہنچائے تا ہم مو جودہ حکومت دعوؤں اور اعلانات سے آگے نہیں بڑھ سکی یہی وجہ ہے کہ صوبے کو شدید مشکلات اور بدترین حالات کا سامنا ہے ۔
انہوں نے کہا کہ اے این پی نے نا مساعد حالات کے باوجود امن ‘تعلیم ‘ ترقی اور معاشرتی استحکام کے لئے نہ صرف یہ کہ ریکارڈ یونیورسٹیوں ‘کالجوں ‘سکولوں ‘ ہسپتالوں اور سڑکوں کا جال بچھایا بلکہ انتہاء پسندی کا بھی ڈٹ کر مقابلہ کیا اگر ہم نے قربانیا ں نہیں دی ہوتیں تو صورتحال کئی گنا زیادہ خراب ہو تی۔انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کو ہمارے دور جیسے چیلنجز کا سامنا نہیں ہے تاہم اس کی کارکردگی ا نتہائی ناقص ہے اور عوام ان کو ووٹ دینے کے اپنے فیصلے پر پچھتا رہے ہیں، انہوں نے کہا کہ تبدیلی کے جو دعوے کئے گئے تھے وہ اعلانات اور خواہشات سے آگے نہ بڑھ سکے۔ انہوں نے کہا کہ وہ مو جودہ وزیر اعلیٰ کو چیلنج کرتے ہیں کہ وہ جب چاہیں اے این پی کے دور کا اپنے دورحکومت کے ساتھ موازنہ کرلیں انہیں یہ بات اچھی طرح معلوم ہو جائے گی کہ اے این پی کا دور موجودہ دور حکومت سے کئی گنا بہتر تھا۔

این وائی او کی آرگنائزنگ کمیٹی کا اجلاس

 June-2016  Comments Off on این وائی او کی آرگنائزنگ کمیٹی کا اجلاس
Jun 272016
 

مورخہ : 27.6.2016 بروز پیر

این وائی او کی آرگنائزنگ کمیٹی کا اجلاس ، چاروں صوبوں سے آرگنائزنگ کمیٹی کے ممبران کی شرکت
محسن داوڑ مرکزی آرگنائزنگ چیئرمین اور ارشد باجوڑی جنرل سیکرٹری منتخب

پشاور (پریس ریلیز) نیشنل یوتھ آرگنائزیشن کی آرگنائزنگ کمیٹی کا اجلاس اسلام آباد میں زیر صدارت سابقہ مرکزی صدر خوشحال خان خٹک منعقد ہوا۔ اے این پی کے صوبائی ترجمان اور این وائی او کے ایڈوائزر ہارون بشیر بلور نے بھی اجلاس میں خصوصی شرکت کی۔ اجلاس میں بلوچستان ، سندھ ، اسلام آباد اور خیبر پختونخوا سے آرگنائزنگ کمیٹی کے تمام ممبران نے شرکت کی۔ اس موقع پر اتفاق رائے سے محسن داوڑ کو مرکزی آرگنائزنگ کمیٹی کا چیئرمین اور ارشد باجوڑی کو جنرل سیکرٹری منتخب کر دیا گیا۔

تحریک انصاف اور تھریک طالبان مولانا سمیع الحق پر مہربان ہیں۔سردار حسین بابک

 June-2016  Comments Off on تحریک انصاف اور تھریک طالبان مولانا سمیع الحق پر مہربان ہیں۔سردار حسین بابک
Jun 262016
 

مورخہ 26جون 2016ء بروز اتوار
تحریک انصاف اور تھریک طالبان مولانا سمیع الحق پر مہربان ہیں۔سردار حسین بابک
صوبائی حکومت نے مدرسہ ریفارمز پروگرام کو پیچھے چھوڑ کر ایک مخصوص سوچ رکھنے والے پر کروروں روپے کی بارش کر دی ہے
ہزارہ ڈویژن سے کروڑوں روپے کے معدنی ذخائر کی چو ری کا سلسلہ جاری ہے،
تعلیم ، صحت کے فنڈز میں کمی اور توانائی کے منصوبوں کیلئے رقم مختص نہ کرکے صوبائی حکومت کو اپنی ناکامی کھلے دل سے تسلیم کر لینی چاہئے
دوسرے کرپشن سکینڈل کی طرح پیڈو لیکس پر حکمرانوں نے پُراسرار خاموشی اختیار کی ہوئی ہے،
پیڈو کے بورڈ آف ڈائریکٹر ز کے ممبران کے استعفٰی اور ان کی جانب سے لگائے گئے الزامات صوبائی حکومت کے کردار پر سوالیہ نشان ہے
بلین ٹری سونامی میں کروڑوں کی کرپشن جاری ہے، عمران خان کمراٹ کی معدنیات پر نظریں رکھے ہوئے ہیں
صوبائی حکومت صوبے کے وسائل کو ضرورت اور انصاف کی بنیاد پر تقسیم کر ے تو صوبے کی مشکلات میں کمی آ سکتی ہے
انصاف کے نعرے لگانے والوں نے ہیوی لوڈ کلچر کو فروغ دے کے نئی مثال رقم کی ہے ، ہسپتالوں میں ادویات تک کے ٹھیکے اپنے پیاروں کو دیئے جا رہے ہیں
بجلی پیداوار کے منصوبے پرائیویٹ کمپنیوں کو دے کر اپنوں کو نوازنے اور صوبے کو سالانہ اربوں روپے کی آمدن سے محروم کر دے گی
پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری و پارلیمانی لیڈر سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ صوبائی حکومت کا بجٹ 2016-17عوام کے ساتھ کھل مذاق ہے ،اور بیرونی امداد میں کمی سمیت وصولیوں میں ناکامی اور مرکزی حکومت سے صوبے کے حقوق کے حصول میں مکمل ناکام ہو گئی ہے،اپنے ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ بجٹ میں تعلیم ، صحت کے فنڈز میں کمی غیر ضروری اخراجات میں اضافہ اور توانائی کے منصوبوں کیلئے رقم مختص نہ کرکے صوبائی حکومت کو اپنی ناکامی کھلے دل سے تسلیم کر لینی چاہئے ، انہوں نے کہا کہ پیڈو لیکس پر حکمرانوں نے دوسرے کرپشن سکینڈل کی طرح پُراسرار خاموشی اختیار کی ہوئی ہے،جبکہ پیڈو کے بورڈ آف ڈائریکٹر ز کے ممبران کے استعفٰی اور ان کی جانب سے لگائے گئے الزامات صوبائی حکومت کے کردار پر سوالیہ نشان ہے،سردار حسین بابک نے کہا کہ توانائی کے بڑے بڑے منصوبے پرائیویٹ سیکٹر کو دینے سے صوبے کو اربوں روپے سالانہ کا نقصان ہو گا ، صوبے کو واٹر چارجز کے علاوہ بجلی کی قیمت فروخت سے محروم کر دے گی، اور یہی وجہ ہے کہ صوبے کے ایماندار افسران نے موجودہ صوبائی حکومت کی بڑے پیمانے پر کرپشن کے خلاف استعفے دیئے اور میدان میں نکلے انہوں نے کہا کہ صوبے کے عوام ان ایماندار افسروں کو قدر کی نگاہ سے دیکھتے ہیں اور حکومت کی طرف سے تحریک انصاف کے مالی معاونین کو نوازنے کا کوئی موقع نہیں دینگے ، انہوں نے کہا کہ بلین ٹری سونامی کیلئے بجٹ 2015-16 میں 10روپے مختص تھے لیکن حکومت نے 3ارب 70کروڑ جاری کر دیئے، انہوں نے کہا کہ بلین ٹری سونامی میں کروڑوں کی کرپشن جاری ہے جبکہ عمران خان کمراٹ کا دورہ کر کے وہاں کی معدنیات پر نظریں رکھے ہوئے ہیں ،انہوں نے کہا کہ دیر اور کوہستان کے عوام با شعور ہیں اور صوبے کی معدنیات کی غیر قانونی طریقے سے سمگلنگ کی کوشش ناکام بنا دیں گے،انہوں نے کہا کہ احتسابی ادارے ہزارہ ڈویژن سے روزانہ کروڑوں روپے کے معدنی ذخائرکی سمگلنگ پر بھی نظر رکھیں۔انہوں نے کہا کہ خیبر بنک کے معاملے پر حکومت کی دوغلی پالیسی لوگوں پر آشکارا ہو گئی ہے ، صوبائی حکومت صوبے کے وسائل کو ضرورت اور انصاف کی بنیاد پر تقسیم کر ے تو صوبے کی مشکلات میں کمی آ سکتی ہے، صوبائی جنرل سیکرٹری نے کہا کہ حکمران وسائل کو ذاتی جاگیر سمجھ کر پی ٹی آئی کے مخصوص ٹولے، جماعت اسلامی اور قومی وطن پارٹی میں تقسیم کر رہے ہیں ،انصاف کے نعرے لگانے والوں نے ہیوی لوڈ کلچر کو فروغ دے کے نئی مثال رقم کی ہے ، اور سکولوں کے فرنیچر سے ہسپتالوں میں ادویات تک کے ٹھیکے اپنے پیاروں کو دیئے جا رہے ہیں،اور چور مچائے شور والی کہا نی سنائی جا رہی ہے،انہوں نے کہا کہ تین سال سے زبانی جمع خرچ پر حکومت چلانے والے بوکھلاہٹ کا شکار ہیں، انہوں نے کہا کہ سپیکر اسمبلی نے بجٹ اجلاس میں پی ٹی آئی کے عہدیدار کا کردار ادا کیا اور ممبران اسمبلی کو بجٹ تجاویز اور بحث کا موقع نہ دے کر ہمارے اعتماد کو ٹھیس پہنچائی ہے انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت غلط بیانی، اجتماعی جھوٹ اور عوام کو بے وقوف بنانے کی ماسٹر ہے،لیکن عوام ان کی اصلیت جان چکے ہیں۔انہوں نے کہا کہ تحریک طالبان اور تحریک انصاف میں یہ قدر مشترک پائی گئی کہ دونوں مولانا سمیع الحق پر مہربان ہیں اور صوبائی حکومت صوبے میں یکساں نصاب تعلیم کو عملی بنانے کے وعدہ کب ایفا کرے گی،اور پرائیویٹ سکولز اور صوبے کے مدارس کب تک یکساں نصاب تعلیم رائج کرنے پر راضی ہونگے۔انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت نے مدرسہ ریفارمز پروگرام کو پیچھے چھوڑ کر ایک مخصوص سوچ رکھنے والے پر کروروں روپے کی بارش کر دی ہے،انہوں نے کہا کہ صوبائی حکومت کو صوبے کے مدارس کو جدید دور کے مطابق نصاب تعلیم رائج کرنے کیلئے تین سال میں کون سا عملی قد م اٹھایا ہے

تورغر میں پی ٹی آئی کے ساتھ اتحاد کسی صورت ممکن نہیں، امیر حیدر خان ہوتی

 June-2016  Comments Off on تورغر میں پی ٹی آئی کے ساتھ اتحاد کسی صورت ممکن نہیں، امیر حیدر خان ہوتی
Jun 262016
 

مورخہ 26جون 2016ء بروز اتوار

تورغر میں پی ٹی آئی کے ساتھ اتحاد کسی صورت ممکن نہیں، امیر حیدر خان ہوتی
اے این پی ضلع ناظم تورغر کے خلاف تحریک عدم اعتماد کا حصہ نہیں بنے گی،
پارٹی فیصلوں کی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف سخت کاروائی کی جائے گی،

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی صدر امیر حیدر خان ہوتی نے کہا ہے کہ ضلع تورغر میں پی ٹی آئی کے ساتھ کسی طور اتحاد ممکن نہیں تاہم ضلع ناظم تورگر کے خلاف کسی تحریک کا حصہ نہیں بنیں گے ، ان خیالات کا اظہار انہوں نے تورغر میں پارٹی کے ایک اہم اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے کیا ، اس موقع پر صوبائی جنرل سیکرٹری سردار حسین بابک اور جاوید خان یوسفزئی بھی موجود تھے، امیر حیدر خان ہوتی نے کہا کہ ضلع ناظم تورغر کے خلاف عدم اعتماد کی تحریک کا حصہ بننے والے پارٹی ممبران کے خلاف کاروائی ہو گی اور اسے پارٹی سے نکالا بھی جا سکتا ہے، انہوں نے کہا کہ ناظم کو ہٹانے اور اس کی جگہ دوسرے شکص کو لانے کیلئے کوششوں میں اے این پی کا کوئی ہاتھ نہیں ہو نا چاہئے ، انہوں نے کہا کہ یہ پارٹی کی واضح پالیسی ہے اور اس کے خلاف اقدام اٹھانے والے ممبر کے خلاف کاروائی کی جائے گی ، انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کے ساتھ کسی صورت اتحاد کا امکان نہیں ، اس موقع پر صوبائی جنرل سیکرٹری سردار حسین بابک نے کہا کہ اے این پی میں جزا و سزا کا عمل جاری ہے اور جو بھی پارٹی فیصلوں کے خلاف کام کرے گا اس کے خلاف کاروائی کی جائے گی

سی پیک پر فاٹا اور صوبے کے ساتھ کسی قسم کا امتیاز برداشت نہیں کیا جائے گا،سردار حسین بابک

 June-2016  Comments Off on سی پیک پر فاٹا اور صوبے کے ساتھ کسی قسم کا امتیاز برداشت نہیں کیا جائے گا،سردار حسین بابک
Jun 242016
 

مورخہ 24جون 2016بروز جمعہ

سی پیک پر فاٹا اور صوبے کے ساتھ کسی قسم کا امتیاز برداشت نہیں کیا جائے گا،سردار حسین بابک
اے این پی دور میں پن بجلی کے متعدد منصوبے شروع کئے گئے جنہیں مکمل کرنے سے اضافی بجلی پیدا کی جا سکتی ہے
کوریڈور ، نیشنل ایکشن پلان جیسے ایشو پر اے این پی کا مؤقف زمینی حقائق کے تناظر میں جرأتمندانہ ہے
خیبر پختونخوا سب سے زیادہ بجلی پیدا کرنے والا صوبہ ہے تاہم ڈور پنجاب کے قبضے میں ہے

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے صوبائی جنرل سیکرٹری و پارلیمانی لیڈر سردار حسین بابک نے کہا ہے کہ پاک چائنہ اکنامک کوریڈور پر اے این پی کا مؤقف واضح ہے اور پارٹی نے پہلے ہی دن سے واضح کر دیا تھا کہ اس منصوبے پر فاٹا اور صوبے کے ساتھ کسی قسم کا امتیاز برداشت نہیں کیا جائے گا ، اپنے ایک بیان میں انہوں نے مزید کہا کہ کاریڈور سمیت تمام اہم ایشوز پر پارٹی نے صوبے اور فاٹا کے حقوق اور اختیارات کی جدوجہد میں بنیادی کردار ادا کر کے یہ ثابت کیا ہے کہ خطے کی سیاسی نمائندگی پر کسی کو بھی سودے بازی کی اجازت نہیں دی جائے گی ،اور پارٹی کے اس کردار کے نتائج اور اثرات کا عوام کے علاوہ بعض سیاسی مخالفین بھی وقتاً فوقتاً اعتراف کرتے آئے ہیں ،حالیہ دنوں میں شدید گرمی اور ناروا لوڈ ژیڈنگ کا ذکر کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ صوبے میں پن بجلی کے بیشتر مواقع موجود ہیں تاہم ان پر فی الفور کام کرنے کی ضرورت ہے جس سے صوبے میں لوڈشیڈنگ کا خاتمہ کرنے میں مدد مل سکتی ہے ، انہوں نے کہا کہ اے این پی نے اپنے دور اقتدار میں پن بجلی کے کئی منصوبے شروع کئے جو تاحال ادھورے ہیں اور کسی نے انہیں مکمل کرنے کی کوشش نہیں کی ، سردار حسین بابک نے کہا کہ خیبر پختونخوا اپنی ضرورت سے زیادہ بجلی پیدا کرنے والا صوبہ ہے تاہم اس کی ڈور پنجاب کے ہاتھوں میں ہے ،انہوں نے کہا کہ آج جو حقوق صوبے کو حاصل ہیں اس کا کریڈٹ بھی اے این پی کو جاتا ہے ،انہوں نے کہا کہ کوریڈور ، نیشنل ایکشن پلان ،پڑوسیوں کے ساتھ تعلقات اور دہشت گردی جیسے ایشو پر اے این پی کا مؤقف زمینی حقائق کے تناظر میں قطعاً واضح اور جرأتمندانہ ہے اور ہم اپنے عوام کے حقوق کیلئے ماضی کی طرح مستقبل میں بھی کسی قسم کی جدوجہد یا قربانی سے دریغ نہیں کریں گے۔