قومی حکومت کے امکانات ہیں،اسٹیبلشمنٹ لاڈلے سے نمٹنے کیلئے حکمت عملی طے کر رہی ہے،میاں افتخار حسین

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی جنرل سیکرٹری میاں افتخار حسین نے کہا ہے کہ موجودہ حکومت رخصتی کے قریب ہے اور جلد یا بدیر مڈٹرم انتخابات سمیت قومی حکومت کے قیام بارے باز گشت سنائی دے گی، ان خیالات کا اظہار انہوں نے پبی پریس کلب میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے کیا، انہوں نے کہا کہ حکومت کی ناکام پالیسیوں کی وجہ سے ملک میں مہنگائی کا طوفان کھڑا ہے اور پاکستانی روپے کی بے قدری نے لوگوں کا جینا دشوار کر دیا ہے ، انہوں نے کہا کہ شیشے کے محلات میں رہنے والے عوام کا دکھ سمجھنے سے قاصر ہیں ، اسٹیبلشمنٹ نے پیپلزپارٹی اور مسلم لیگ جسی بڑی سیاسی جماعتوں کو ناراض کر کے اقتدار عمران کو دیا لیکن ان کی توقعات کے برعکس نیازی ناکام ہو گیا ،انہوں نے انکشاف کیا کہ اندرون خانہ لاڈلے سے نمٹنے کی حکمت عملی بارے بات چیت چل رہی ہے اور عنقریب اس حکومت کو لانے والے ہی اسے رخصت کر دیں گے، انہوں نے بتایا کہ قبل از وقت انتخابات سمیت قومی حکومت کے قیام یا پھر اس سے زیادہ خطرناک صورتحال کا سامنا کرنا پڑ سکتا ہے، میاں افتخار حسین نے کہا کہ علیم خان کی گرفتاری ایک ڈرامہ ہے اور اب اسے کلین چٹ دے کر وزارت اعلیٰ تک پہنچایا جائے گا،علیم خان کو کرپشن کیس میں گرفتار کر کے اسے ہیرو بنا کر پیش کیا جا رہا ہے ، اپوزیشن رہنماؤں کو چور اور ڈاکو کہا جا تا ہے ،شہباز شریف کو پی اے سی کا چیئرمین بنانے میں حکومت کا پورا پورا ہاتھ ہے،شیخ رشید کا شور کوئی معنی نہیں رکھتا جب شہباز شریف کو چیئرمین بنایا گیا اس وقت وہ گرفتار تھے،انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کا گراف کرپشن میں سب سے اوپر ہے اور تحریک انصاف کرپٹ مافیا کی بڑی آماجگاہ بن چکی ہے ،ایک سوال کے جواب میں انہوں نے فیض آباد دھرنا کیس کو خوش آئند قرار دیا اور کہا کہ عدالتی فیصلے میں دھرنے کو سپورٹ کرنے والوں کی نشاندہی کر دی گئی ہے ، انہوں نے کہا کہ سوال یہ ہے کہ میڈیا کو کون کنٹرول کر رہا ہے ، ارمان لونی کے واقعہ پر میڈیا کی خاموشی سوالیہ نشان ہے جبکہ اجازت ملنے کے تین دن بعد اس واقعے کو میڈیا پر لایا گیا، انہوں نے کہا کہ اسٹیبلشمنٹ ارمان لونی کے قاتل کو بچانے کی کوشش کر رہی ہے،انہوں نے کہا کہ ضیا اور مشرف دور میں بھی میڈیا پر اتنی پابندیاں نہیں تھیں جتنی اس سول مارشل لا میں ہیں ، یہ پابندیاں اس بات کا ثبوت ہیں کہ عمران نیازی صرف کٹھ پتلی ہے اور حکومت کوئی اور چلا رہا ہے،انہوں نے کہا کہ ملک کی بقا کیلئے لازم ہے کہ تمام ادارے اپنی آئینی حدود میں رہ کر کام کریں ،انہوں نے کہا کہ پشاور بی آرٹی کی لاگت سو ارب روپے سے بڑھ چکی ہے لیکن کوئی پوچھنے والا نہیں اسی طرح مالم جبہ کرپشن کیس بھی سرد خانے کی نذر ہو چکا ہے،انہوں نے کہا کہ پی ٹی آئی کی حکومت عوام کے ووٹوں سے نہیں بلکہ کسی کے اشارے پر آئی ہے اور اسے 22کروڑ عوام پر مسلط کیا گیا ہے۔

Facebook Comments