ووٹ کے تقدس کی پامالی ملک اور جمہوریت کیلئے خطرے کی گھنٹی ہے ، میاں افتخار حسین

ووٹ کے تقدس کی پامالی ملک اور جمہوریت کیلئے خطرے کی گھنٹی ہے ، میاں افتخار حسین

پشاور ( پ ر ) عوامی نیشنل پارٹی کے مرکزی جنرل سیکرٹری میاں افتخار حسین نے کہا ہے کہ ووٹ کے تقدس کی پامالی ملک کیلئے خطرے کی گھنٹی ہے، جمہوریت عوام کی حکمرانی کا نام ہے۔عوام ووٹ کے ریعے حق رائے دہی استعمال کرتے ہیں، ان خیالات کا اظہار انہوں نے اسلام آباد میں نواز شریف کی زیر صدارت ’ ووٹ کو عزت دو ‘‘ کے موضوع پر منعقدہ سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا ، انہوں نے کہا کہ اے این پی کے مرکزی صدر اسفندیار ولی خان خود اس سیمینار میں شریک ہونا چاہتے تھے تاہم اپنی علالت کے باعث وہ نہ آ سکے، میاں افتخار حسین نے اپنے خطاب میں کہا کہ گزشتہ70سال سے کسی منتخب وزیر اعظم کو آئینی مدت پوری نہیں کرنے دی گئی جو بلاشبہ لمحہ فکریہ ہے اور انتہائی عجیب صورتحال ہے عوام کے ووٹوں سے منتخب ہونے والا وزیر اعظم پیشیاں بھگت رہا ہے اور سینکڑوں پختونوں کا قاتل راؤ انوار صرف خط لکھ دیتا ہے اور پھر دوسرے خط کے بعد وی آئی پی پروٹوکول کے ساتھ عدالت میں پیش ہو جاتا ہے ، ملک میں قانون کا دوہرا معیار نہیں ہونا چاہئے ،راؤ انوار سمیت اس کے پیچھے موجود نیٹ ورک کو گرفتار کر کے قرار واقعی سزا دی جائے ، انہوں نے کہا کہ پختونوں کو درپیش مسائل کے حل کیلئے حکومت ترجیحی بنیادوں پر کام کرے ، انہوں نے واضح کیا کہ ہمیشہ سے ہم ظلم کی چکی میں پستے رہے کبھی غدار اور کبھی ایجنٹ کے الزامات لگتے رہے لیکن کسی کو ووٹ کے تقدس کا خیال نہ آیا البتہ اب پنجاب سے تعلق رکھنے والے وزیر اعظم کو گھر بھیجنے کے بعد ووٹ کے تقدس کا خیال آ ہی گیا ہے تو ہم آپ کے ساتھ ہیں،انہوں نے کہا کہ ہمیں تو شاید وہم تھا کہ پنجاب کے وزیر اعطم کو کوئی نہیں چھیڑ سکتا لیکن یہ دن بھی ہمیں دیکھنا پڑا کہ پنجاب کے وزیراعطم کو بھی کرسی چھوڑنی پڑی ، انہوں نے کہا کہ ہم نواز شریف کے اتحادی نہیں صرف ووت کی عزت کیلئے ان کے ساتھ ہم آواز ہیں ،انہوں نے کہا کہ ووٹ کے تقدس سے تو بات بہت آگے جا چکی ہے تاہم میدان میں کھڑے ہیں، سب سے زیادہ افسوسناک بات یہ ہے کہ پہلے سے پتہ ہو کہ کوئی آئے گا اور ایسے فیصلے صادر کرے گا،میاں افتخار حسین نے کہا کہ اتنی اکثریت کے باوجود بھی اگر وزیر اعظم کو گھر بھیجا سکتا ہے تو پھر اس ملک میں جمہوریت کیسے پروان چڑھے گی۔انہوں نے کہا کہ ہم نے اپنے دور اقتدار میں دہشت گردوں کے خلاف جہاد کیا اور دہشتگردی کے سامنے سیسی پلائی ہوئی دیوار ثابت ہوئے جس میں مجھے اپنے بیٹے کی بھی قربانی دینا پڑی لیکن میں ڈرا نہیں اور ملک کی بقا کیلئے ڈٹا رہا ، انہوں نے کہا کہ ہم قربانی نہ دیتے تو شاید آج ملک میں ووٹ کے تقدس کی بات بھی ہوتی کیونکہ دہشت گرد ملک پر قبضہ کرنا چاہتے تھے، انہوں نے کہا کہ سب کو مل کر اس اہم مقصد کیلئے ساتھ دینا ہوگا۔

Facebook Comments